قیامت کے روز فرشتوں کو کیسے موت آئیگی؟

Urdu Stories
Urdu Stories
Q4quotes Stories in Urdu

قیامت کے روز فرشتوں کو کیسے موت آئیگی؟

قیامت کے روز فرشتوں کو کیسے موت آئیگی: وہ دنیا کے لوگوں میں سب سے زیادہ بدبخت ہوں گے۔ جو قیامت کا منظر اپنی آنکھوں سے دیکھیں گے۔ اس دن قیامت سے پہلے ایک خوفناک آواز سنائی دے گی۔ جس کا خوف سب کو سب کچھ بھول جائے گا۔
اس خوفناک آواز کے بعد سورج پھٹ جائے گا، ستارے ٹوٹ جائیں گے، چاند ریزہ ریزہ ہو جائے گا اور زمین پھٹ جائے گی، اور پہاڑ روئی میں بدل جائیں گے۔ سمندروں میں آگ لگ جائے گی۔ دنیا تباہ ہو جائے گی۔ پھر اللہ تعالیٰ اس خوفناک آواز سے پوری دنیا کو موت عطا فرمائے گا۔
جب یہ سب ختم ہو جائے گا تو پہلا، دوسرا، تیسرا اور اسی طرح ساتویں آسمان تک سب کو موت کے گھاٹ اتار دیا جائے گا۔ تمام فرشتے نیچے گرائے جائیں گے۔
پھر اللہ تعالیٰ بتائے گا کہ کون باقی ہے۔ حضرت عزرائیل علیہ السلام بادشاہِ موت کی آواز سن کر کہیں گے: “اے اللہ میرے سمیت تیرے چار فرشتے ہیں۔” یہ جبرائیل، میکائیل اور اسرافیل ہیں۔
اللہ تعالیٰ فرمائے گا کہ جبرائیل اور میکائیل مر جائیں گے۔ اللہ کا عرش اس پر بولے گا یا اللہ جبرائیل اور میکائیل سے۔ پھر اللہ تعالیٰ فرمائے گا کہ میرے خاموش عرش کے نیچے موت موت ہے۔
پھر اللہ کہے گا کہ کون رہ گیا؟ جواب آئے گا کہ عرش کے فرشتے یعنی اسرافیل اور عزرائیل۔ پھر اللہ تعالیٰ فرمائے گا کہ اسرافیل مر جائے گا، اس وقت اسرافیل سور پر پھونک دے گا اور سور اس کے ہاتھ سے نکل کر اللہ کے عرش پر جا کر بیٹھ جائے گا۔
پھر اللہ اوپر ہو گا اور نیچے صرف عزرائیل علیہ السلام ہوں گے۔ پھر اللہ پوچھے گا کہ کون رہ گیا؟ جواب میں عزرائیل علیہ السلام کہیں گے کہ اب میں اکیلا رہ گیا ہوں۔
پھر اللہ تعالیٰ فرمائے گا کہ اگر تو چلا جائے تو چاہے مر جائے، تو میری مخلوق میں سے ہے۔ پھر اللہ تعالیٰ فرمائے گا کہ کوئی ہے جو میرا شریک ہو تو آؤ۔ پھر اللہ زمین و آسمان کو ہلا دے گا۔ اور وہ کہے گا کہ میں اکیلا ہوں اور میرا کوئی شریک نہیں۔ اللہ اکبر
اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ ہم سب کو ایمان کی زندگی اور ایمان کی موت عطا فرمائے۔ اللہ ہم سب کو قیامت کے دن کی تیاری کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ اللہ ہم سب کا حامی و ناصر ہو۔ آمین یا رب العالمین